غنچے کا جواب ہو گیا ہے

غنچے کا جواب ہو گیا ہے

دل کھل کے گلاب ہو گیا ہے

پا کر تب و تاب سوز غم سے

آنسو در ناب ہو گیا ہے

کیا فکر بہار و محفل یار

اب ختم وہ باب ہو گیا ہے

امید سکوں کا ذکر رعنا

سب خواب و سراب ہو گیا ہے

مرنا بھی نہیں ہے اپنے بس میں

جینا بھی عذاب ہو گیا ہے

(370) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ghunche Ka Jawab Ho Gaya Hai In Urdu By Famous Poet Abdul Aziz Fitrat. Ghunche Ka Jawab Ho Gaya Hai is written by Abdul Aziz Fitrat. Enjoy reading Ghunche Ka Jawab Ho Gaya Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Abdul Aziz Fitrat. Free Dowlonad Ghunche Ka Jawab Ho Gaya Hai by Abdul Aziz Fitrat in PDF.