وعدۂ وصل ہے لذت انتظار اٹھا

وعدۂ وصل ہے لذت انتظار اٹھا

اور پھر عمر بھر اک غم اعتبار اٹھا

اس کا غم میرے دل میں ہے اب بانسری کی طرح

نغمۂ درد سے زخمۂ اختیار اٹھا

میں اٹھا تو فلک سے بہت چاند تارے گرے

اور صحرائے جاں میں بہت غم غبار اٹھا

کچھ رہا میرے دل میں تو اک اضطراب رہا

میں سدا اپنی ہی خاک سے بے قرار اٹھا

اے خدا رزق پرواز دے شہپروں کو مرے

میرے اطراف سے آسماں کا حصار اٹھا

تو مجھے آسماں دے نہ دے بے زمین نہ کر

دشت جاں سے مرے موسم تاب کار اٹھا

یا مری آنکھ سے چھین لے سب خزانۂ خواب

یا مری خاک سے زندگی کا فشار اٹھا

(614) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Wada-e-wasl Hai Lazzat-e-intizar UTha In Urdu By Famous Poet Abdullah Kamal. Wada-e-wasl Hai Lazzat-e-intizar UTha is written by Abdullah Kamal. Enjoy reading Wada-e-wasl Hai Lazzat-e-intizar UTha Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Abdullah Kamal. Free Dowlonad Wada-e-wasl Hai Lazzat-e-intizar UTha by Abdullah Kamal in PDF.