شکست

مرے کلیجہ کی رگ رگ سے ہوک اٹھتی ہے

مجھے مری ہر شکستوں کی داستاں نہ سنا

نہ پوچھ مجھ سے مری خامشی کا راز نہ پوچھ

مرے دماغ کا ہر گوشہ دکھ رہا ہے ابھی

فضائے ظلمت ماضی میں اے مرے ہمدم

ڈھکے ڈھکے سے مری کامرانیوں کے نشاں

اداس اداس نگاہوں کی شمع سے نہ ٹٹول

ہر اک کے سینہ پہ بار شکست ہے اس وقت

ترا خلوص مری داستاں کا عنواں ہے

مرے حبیب مجھے اب تو اپنی مہلت دے

کہ اپنے درد کو دل میں چھپا کے غم خوردہ

جہاں سے دور کہیں اس طرف نکل جاؤں

وہ دیکھ وقت کے چہرے پہ صاف لکھا ہے

کہ یہ شکست مری آخری شکست نہیں

(449) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Shikast In Urdu By Famous Poet Abid Almi. Shikast is written by Abid Almi. Enjoy reading Shikast Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Abid Almi. Free Dowlonad Shikast by Abid Almi in PDF.