اک عمر سے جس کو لئے پھرتا ہوں نظر میں

اک عمر سے جس کو لئے پھرتا ہوں نظر میں

وہ روپ ہے سورج میں نہ وہ رنگ سحر میں

چلتی ہیں ہوائیں تو برس جاتی ہیں آنکھیں

چھائے ہیں تری یاد کے بادل مرے گھر میں

حیراں ہوئے جاتے ہیں مجھے دیکھنے والے

آئینہ معلق ہے مرے دیدۂ تر میں

اک چاند کو چھونے کی تمنا میں ہوں پاگل

بادل سا اڑا جاتا ہوں خوابوں کے سفر میں

موتی مری آنکھوں نے لٹا ڈالے ہیں فاخرؔ

خوش رنگ کوئی پھول کھلا جب بھی جگر میں

(1468) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ek Umr Se Jis Ko Liye Phirta Hun Nazar Mein In Urdu By Famous Poet Ahmad Fakhir. Ek Umr Se Jis Ko Liye Phirta Hun Nazar Mein is written by Ahmad Fakhir. Enjoy reading Ek Umr Se Jis Ko Liye Phirta Hun Nazar Mein Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Fakhir. Free Dowlonad Ek Umr Se Jis Ko Liye Phirta Hun Nazar Mein by Ahmad Fakhir in PDF.