عاشقی میں میرؔ جیسے خواب مت دیکھا کرو

عاشقی میں میرؔ جیسے خواب مت دیکھا کرو

باؤلے ہو جاؤ گے مہتاب مت دیکھا کرو

جستہ جستہ پڑھ لیا کرنا مضامین وفا

پر کتاب عشق کا ہر باب مت دیکھا کرو

اس تماشے میں الٹ جاتی ہیں اکثر کشتیاں

ڈوبنے والوں کو زیر آب مت دیکھا کرو

مے کدے میں کیا تکلف مے کشی میں کیا حجاب

بزم ساقی میں ادب آداب مت دیکھا کرو

ہم سے درویشوں کے گھر آؤ تو یاروں کی طرح

ہر جگہ خس خانہ و برفاب مت دیکھا کرو

مانگے تانگے کی قبائیں دیر تک رہتی نہیں

یار لوگوں کے لقب القاب مت دیکھا کرو

تشنگی میں لب بھگو لینا بھی کافی ہے فرازؔ

جام میں صہبا ہے یا زہراب مت دیکھا کرو

(1373) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Aashiqi Mein Mir Jaise KHwab Mat Dekha Karo In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Aashiqi Mein Mir Jaise KHwab Mat Dekha Karo is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Aashiqi Mein Mir Jaise KHwab Mat Dekha Karo Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Aashiqi Mein Mir Jaise KHwab Mat Dekha Karo by Ahmad Faraz in PDF.