دل منافق تھا شب ہجر میں سویا کیسا

دل منافق تھا شب ہجر میں سویا کیسا

اور جب تجھ سے ملا ٹوٹ کے رویا کیسا

زندگی میں بھی غزل ہی کا قرینہ رکھا

خواب در خواب ترے غم کو پرویا کیسا

اب تو چہروں پہ بھی کتبوں کا گماں ہوتا ہے

آنکھیں پتھرائی ہوئی ہیں لب گویا کیسا

دیکھ اب قرب کا موسم بھی نہ سرسبز لگے

ہجر ہی ہجر مراسم میں سمویا کیسا

ایک آنسو تھا کہ دریائے ندامت تھا فرازؔ

دل سے بے باک شناور کو ڈبویا کیسا

(961) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Dil Munafiq Tha Shab-e-hijr Mein Soya Kaisa In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Dil Munafiq Tha Shab-e-hijr Mein Soya Kaisa is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Dil Munafiq Tha Shab-e-hijr Mein Soya Kaisa Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Dil Munafiq Tha Shab-e-hijr Mein Soya Kaisa by Ahmad Faraz in PDF.