ہم تو خوش تھے کہ چلو دل کا جنوں کچھ کم ہے

ہم تو خوش تھے کہ چلو دل کا جنوں کچھ کم ہے

اب جو آرام بہت ہے تو سکوں کچھ کم ہے

رنگ گریہ نے دکھائی نہیں اگلی سی بہار

اب کے لگتا ہے کہ آمیزش خوں کچھ کم ہے

اب ترا ہجر مسلسل ہے تو یہ بھید کھلا

غم دل سے غم دنیا کا فسوں کچھ کم ہے

اس نے دکھ سارے زمانے کا مجھے بخش دیا

پھر بھی لالچ کا تقاضا ہے کہوں کچھ کم ہے

راہ دنیا سے نہیں دل کی گزر گاہ سے آ

فاصلہ گرچہ زیادہ ہے پہ یوں کچھ کم ہے

تو نے دیکھا ہی نہیں مجھ کو بھلے وقتوں میں

یہ خرابی کہ میں جس حال میں ہوں کچھ کم ہے

آگ ہی آگ مرے قریۂ تن میں ہے فرازؔ

پھر بھی لگتا ہے ابھی سوز دروں کچھ کم ہے

(855) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hum To KHush The Ki Chalo Dil Ka Junun Kuchh Kam Hai In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Hum To KHush The Ki Chalo Dil Ka Junun Kuchh Kam Hai is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Hum To KHush The Ki Chalo Dil Ka Junun Kuchh Kam Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Hum To KHush The Ki Chalo Dil Ka Junun Kuchh Kam Hai by Ahmad Faraz in PDF.