جب تجھے یاد کریں کار جہاں کھینچتا ہے

جب تجھے یاد کریں کار جہاں کھینچتا ہے

اور پھر عشق وہی کوہ گراں کھینچتا ہے

کسی دشمن کا کوئی تیر نہ پہنچا مجھ تک

دیکھنا اب کے مرا دوست کماں کھینچتا ہے

عہد فرصت میں کسی یار گزشتہ کا خیال

جب بھی آتا ہے تو جیسے رگ جاں کھینچتا ہے

دل کے ٹکڑوں کو کہاں جوڑ سکا ہے کوئی

پھر بھی آوازۂ آئینہ گراں کھینچتا ہے

انتہا عشق کی کوئی نہ ہوس کی کوئی

دیکھنا یہ ہے کہ حد کون کہاں کھینچتا ہے

کھنچتے جاتے ہیں رسن بستہ غلاموں کی طرح

جس طرف قافلۂ عمر رواں کھینچتا ہے

ہم تو رہوار زبوں ہیں وہ مقدر کا سوار

خود ہی مہمیز کرے خود ہی عناں کھینچتا ہے

رشتۂ تیغ و گلو اب بھی سلامت ہے فرازؔ

اب بھی مقتل کی طرف دل سا جواں کھینچتا ہے

(961) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Jab Tujhe Yaad Karen Kar-e-jahan Khenchta Hai In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Jab Tujhe Yaad Karen Kar-e-jahan Khenchta Hai is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Jab Tujhe Yaad Karen Kar-e-jahan Khenchta Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Jab Tujhe Yaad Karen Kar-e-jahan Khenchta Hai by Ahmad Faraz in PDF.