کل ہم نے بزم یار میں کیا کیا شراب پی

کل ہم نے بزم یار میں کیا کیا شراب پی

صحرا کی تشنگی تھی سو دریا شراب پی

اپنوں نے تج دیا ہے تو غیروں میں جا کے بیٹھ

اے خانماں خراب نہ تنہا شراب پی

تو ہم سفر نہیں ہے تو کیا سیر گلستاں

تو ہم سبو نہیں ہے تو پھر کیا شراب پی

اے دل گرفتۂ غم جاناں سبو اٹھا

اے کشتۂ جفائے زمانہ شراب پی

اک مہرباں بزرگ نے یہ مشورہ دیا

دکھ کا کوئی علاج نہیں جا شراب پی

بادل گرج رہا تھا ادھر محتسب ادھر

پھر جب تلک یہ عقدہ نہ سلجھا شراب پی

اے تو کہ تیرے در پہ ہیں رندوں کے جمگھٹے

اک روز اس فقیر کے گھر آ شراب پی

دو جام ان کے نام بھی اے پیر میکدہ

جن رفتگاں کے ساتھ ہمیشہ شراب پی

کل ہم سے اپنا یار خفا ہو گیا فرازؔ

شاید کہ ہم نے حد سے زیادہ شراب پی

(1173) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Kal Humne Bazm-e-yar Mein Kya Kya Sharab Pi In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Kal Humne Bazm-e-yar Mein Kya Kya Sharab Pi is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Kal Humne Bazm-e-yar Mein Kya Kya Sharab Pi Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Kal Humne Bazm-e-yar Mein Kya Kya Sharab Pi by Ahmad Faraz in PDF.