کروں نہ یاد مگر کس طرح بھلاؤں اسے

کروں نہ یاد مگر کس طرح بھلاؤں اسے

غزل بہانہ کروں اور گنگناؤں اسے

وہ خار خار ہے شاخ گلاب کی مانند

میں زخم زخم ہوں پھر بھی گلے لگاؤں اسے

یہ لوگ تذکرے کرتے ہیں اپنے لوگوں کے

میں کیسے بات کروں اب کہاں سے لاؤں اسے

مگر وہ زود فراموش زود رنج بھی ہے

کہ روٹھ جائے اگر یاد کچھ دلاؤں اسے

وہی جو دولت دل ہے وہی جو راحت جاں

تمہاری بات پہ اے ناصحو گنواؤں اسے

جو ہم سفر سر منزل بچھڑ رہا ہے فرازؔ

عجب نہیں ہے اگر یاد بھی نہ آؤں اسے

(993) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Karun Na Yaad Magar Kis Tarah Bhulaun Use In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Karun Na Yaad Magar Kis Tarah Bhulaun Use is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Karun Na Yaad Magar Kis Tarah Bhulaun Use Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Karun Na Yaad Magar Kis Tarah Bhulaun Use by Ahmad Faraz in PDF.