لے اڑا پھر کوئی خیال ہمیں

لے اڑا پھر کوئی خیال ہمیں

ساقیا ساقیا سنبھال ہمیں

رو رہے ہیں کہ ایک عادت ہے

ورنہ اتنا نہیں ملال ہمیں

خلوتی ہیں ترے جمال کے ہم

آئنے کی طرح سنبھال ہمیں

مرگ انبوہ جشن شادی ہے

مل گئے دوست حسب حال ہمیں

اختلاف جہاں کا رنج نہ تھا

دے گئے مات ہم خیال ہمیں

کیا توقع کریں زمانے سے

ہو بھی گر جرأت سوال ہمیں

ہم یہاں بھی نہیں ہیں خوش لیکن

اپنی محفل سے مت نکال ہمیں

ہم ترے دوست ہیں فرازؔ مگر

اب نہ اور الجھنوں میں ڈال ہمیں

(2123) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Le UDa Phir Koi KHayal Hamein In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Le UDa Phir Koi KHayal Hamein is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Le UDa Phir Koi KHayal Hamein Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Le UDa Phir Koi KHayal Hamein by Ahmad Faraz in PDF.