نہ دل سے آہ نہ لب سے صدا نکلتی ہے

نہ دل سے آہ نہ لب سے صدا نکلتی ہے

مگر یہ بات بڑی دور جا نکلتی ہے

ستم تو یہ ہے کہ عہد ستم کے جاتے ہی

تمام خلق مری ہم نوا نکلتی ہے

وصال و ہجر کی حسرت میں جوئے کم مایہ

کبھی کبھی کسی صحرا میں جا نکلتی ہے

میں کیا کروں مرے قاتل نہ چاہنے پر بھی

ترے لیے مرے دل سے دعا نکلتی ہے

وہ زندگی ہو کہ دنیا فرازؔ کیا کیجے

کہ جس سے عشق کرو بے وفا نکلتی ہے

(1495) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Na Dil Se Aah Na Lab Se Sada Nikalti Hai In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Na Dil Se Aah Na Lab Se Sada Nikalti Hai is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Na Dil Se Aah Na Lab Se Sada Nikalti Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Na Dil Se Aah Na Lab Se Sada Nikalti Hai by Ahmad Faraz in PDF.