قربتوں میں بھی جدائی کے زمانے مانگے

قربتوں میں بھی جدائی کے زمانے مانگے

دل وہ بے مہر کہ رونے کے بہانے مانگے

ہم نہ ہوتے تو کسی اور کے چرچے ہوتے

خلقت شہر تو کہنے کو فسانے مانگے

یہی دل تھا کہ ترستا تھا مراسم کے لیے

اب یہی ترک تعلق کے بہانے مانگے

اپنا یہ حال کہ جی ہار چکے لٹ بھی چکے

اور محبت وہی انداز پرانے مانگے

زندگی ہم ترے داغوں سے رہے شرمندہ

اور تو ہے کہ سدا آئینہ خانے مانگے

دل کسی حال پہ قانع ہی نہیں جان فرازؔ

مل گئے تم بھی تو کیا اور نہ جانے مانگے

(2947) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Qurbaton Mein Bhi Judai Ke Zamane Mange In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Qurbaton Mein Bhi Judai Ke Zamane Mange is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Qurbaton Mein Bhi Judai Ke Zamane Mange Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Qurbaton Mein Bhi Judai Ke Zamane Mange by Ahmad Faraz in PDF.