میں اور تو

روز جب دھوپ پہاڑوں سے اترنے لگتی

کوئی گھٹتا ہوا بڑھتا ہوا بیکل سایہ

ایک دیوار سے کہتا کہ مرے ساتھ چلو

اور زنجیر رفاقت سے گریزاں دیوار

اپنے پندار کے نشے میں سدا استادہ

خواہش ہم دم دیرینہ پہ ہنس دیتی تھی

کون دیوار کسی سائے کے ہمراہ چلی

کون دیوار ہمیشہ مگر استادہ رہی

وقت دیوار کا ساتھی ہے نہ سائے کا رفیق

اور اب سنگ و گل و خشت کے ملبے کے تلے

اسی دیوار کا پندار ہے ریزہ ریزہ

دھوپ نکلی ہے مگر جانے کہاں ہے سایہ

(736) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Main Aur Tu In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Main Aur Tu is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Main Aur Tu Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Main Aur Tu by Ahmad Faraz in PDF.