چھوڑو اب اس چراغ کا چرچا بہت ہوا

چھوڑو اب اس چراغ کا چرچا بہت ہوا

اپنا تو سب کے ہاتھوں خسارہ بہت ہوا

کیا بے سبب کسی سے کہیں اوبتے ہیں لوگ

باور کرو کہ ذکر تمہارا بہت ہوا

بیٹھے رہے کہ تیز بہت تھی ہوائے شوق

دشت ہوس کا گرچہ ارادہ بہت ہوا

آخر کو اٹھ گئے تھے جو اک بات کہہ کے ہم

سنتے ہیں پھر اسی کا اعادہ بہت ہوا

ملنے دیا نہ اس سے ہمیں جس خیال نے

سوچا تو اس خیال سے صدمہ بہت ہوا

اچھا تو اب سفر ہو کسی اور سمت میں

یہ روز و شب کا جاگنا سونا بہت ہوا

(420) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

ChhoDo Ab Us Charagh Ka Charcha Bahut Hua In Urdu By Famous Poet Ahmad Mahfuz. ChhoDo Ab Us Charagh Ka Charcha Bahut Hua is written by Ahmad Mahfuz. Enjoy reading ChhoDo Ab Us Charagh Ka Charcha Bahut Hua Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Mahfuz. Free Dowlonad ChhoDo Ab Us Charagh Ka Charcha Bahut Hua by Ahmad Mahfuz in PDF.