غبار جہاں میں چھپے باکمالوں کی صف دیکھتا ہوں

غبار جہاں میں چھپے باکمالوں کی صف دیکھتا ہوں

میں عہد گزشتہ کے آشفتگاں کی طرف دیکھتا ہوں

میں سر کو چھپانے سے پہلے جہاں کا ہدف دیکھتا ہوں

مہکتے ہوئے نیک پھولوں کو خنجر بکف دیکھتا ہوں

ہے اندر تلک ایک نیزہ گلو میں کار وضو میں

تو اس ہاؤ میں میں کہاں پر ہوں کس کی طرف دیکھتا ہوں

زمانے کی گھاتیں کتابوں کی باتوں کو جھٹلا رہی ہیں

میں حیرت کا مارا تماشائی عز و شرف دیکھتا ہوں

پنہ مل نہ پائی خیال خدا میں جمال خودی میں

میں اس بے بسی میں پریشان سوئے نجف دیکھتا ہوں

(420) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ghubar-e-jahan Mein Chhupe Ba-kamalon Ki Saf Dekhta Hun In Urdu By Famous Poet Ain Tabish. Ghubar-e-jahan Mein Chhupe Ba-kamalon Ki Saf Dekhta Hun is written by Ain Tabish. Enjoy reading Ghubar-e-jahan Mein Chhupe Ba-kamalon Ki Saf Dekhta Hun Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ain Tabish. Free Dowlonad Ghubar-e-jahan Mein Chhupe Ba-kamalon Ki Saf Dekhta Hun by Ain Tabish in PDF.