آنکھ کچھ بے سبب ہی نم تو نہیں

آنکھ کچھ بے سبب ہی نم تو نہیں

یہ کہیں آپ کا کرم تو نہیں

ہم نے مانا کہ روشنی کم ہے

پھر بھی یہ صبح شام غم تو نہیں

عشق میں بندشیں ہزار سہی

بندش دانہ و درم تو نہیں

تھا کہاں عشق کو سلیقۂ غم

وہ نظر مائل کرم تو نہیں

مونس شب رفیق تنہائی

درد دل بھی کسی سے کم تو نہیں

وہ کہاں اور کہاں ستم گاری

کچھ بھی کہتے ہوں لوگ ہم تو نہیں

شکوے کی بات اور ہے ورنہ

لطف پیہم کوئی ستم تو نہیں

دیکھ اے قصہ گوئے رنج فراق

نوک مژگان یار نم تو نہیں

ان کے دل سے سوال کرتا ہے

یہ تبسم شریک غم تو نہیں

(387) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Aankh Kuchh Be-sabab Hi Nam To Nahin In Urdu By Famous Poet Ali Jawwad Zaidi. Aankh Kuchh Be-sabab Hi Nam To Nahin is written by Ali Jawwad Zaidi. Enjoy reading Aankh Kuchh Be-sabab Hi Nam To Nahin Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ali Jawwad Zaidi. Free Dowlonad Aankh Kuchh Be-sabab Hi Nam To Nahin by Ali Jawwad Zaidi in PDF.