جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہی

جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہی

کھلتے ہیں غلاموں پر اسرار شہنشاہی

عطارؔ ہو رومیؔ ہو رازیؔ ہو غزالیؔ ہو

کچھ ہاتھ نہیں آتا بے آہ سحرگاہی

نومید نہ ہو ان سے اے رہبر فرزانہ

کم کوش تو ہیں لیکن بے ذوق نہیں راہی

اے طائر لاہوتی اس رزق سے موت اچھی

جس رزق سے آتی ہو پرواز میں کوتاہی

دارا و سکندر سے وہ مرد فقیر اولیٰ

ہو جس کی فقیری میں بوئے اسد اللہٰی

آئین جواں مرداں حق گوئی و بیباکی

اللہ کے شیروں کو آتی نہیں روباہی

(651) ووٹ وصول ہوئے

Related Poetry

Your Thoughts and Comments

Jab Ishq Sikhata Hai Aadab-e-KHud-agahi In Urdu By Famous Poet Allama Iqbal. Jab Ishq Sikhata Hai Aadab-e-KHud-agahi is written by Allama Iqbal. Enjoy reading Jab Ishq Sikhata Hai Aadab-e-KHud-agahi Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Allama Iqbal. Free Dowlonad Jab Ishq Sikhata Hai Aadab-e-KHud-agahi by Allama Iqbal in PDF.