کمال ترک نہیں آب و گل سے مہجوری

کمال ترک نہیں آب و گل سے مہجوری

کمال ترک ہے تسخیر خاکی و نوری

میں ایسے فقر سے اے اہل حلقہ باز آیا

تمہارا فقر ہے بے دولتی و رنجوری

نہ فقر کے لیے موزوں، نہ سلطنت کے لیے

وہ قوم جس نے گنوائی متاع تیموری

سنے نہ ساقئ مہوش تو اور بھی اچھا

عیار گرمی صحبت ہے حرف معذوری

حکیم و عارف و صوفی تمام مست ظہور

کسے خبر کہ تجلی ہے عین مستوری

وہ ملتفت ہوں تو کنج قفس بھی آزادی

نہ ہوں تو صحن چمن بھی مقام مجبوری

برا نہ مان، ذرا آزما کے دیکھ اسے

فرنگ دل کی خرابی خرد کی معموری

(991) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Kamal-e-tark Nahin Aab-o-gil Se Mahjuri In Urdu By Famous Poet Allama Iqbal. Kamal-e-tark Nahin Aab-o-gil Se Mahjuri is written by Allama Iqbal. Enjoy reading Kamal-e-tark Nahin Aab-o-gil Se Mahjuri Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Allama Iqbal. Free Dowlonad Kamal-e-tark Nahin Aab-o-gil Se Mahjuri by Allama Iqbal in PDF.