نہ ہو طغیان مشتاقی تو میں رہتا نہیں باقی

نہ ہو طغیان مشتاقی تو میں رہتا نہیں باقی

کہ میری زندگی کیا ہے یہی طغیان مشتاقی

مجھے فطرت نوا پر پے بہ پے مجبور کرتی ہے

ابھی محفل میں ہے شاید کوئی درد آشنا باقی

وہ آتش آج بھی تیرا نشیمن پھونک سکتی ہے

طلب صادق نہ ہو تیری تو پھر کیا شکوہ ساقی

نہ کر افرنگ کا اندازہ اس کی تابناکی سے

کہ بجلی کے چراغوں سے ہے اس جوہر کی براقی

دلوں میں ولولے آفاق گیری کے نہیں اٹھتے

نگاہوں میں اگر پیدا نہ ہو انداز آفاقی

خزاں میں بھی کب آ سکتا تھا میں صیاد کی زد میں

مری غماز تھی شاخ نشیمن کی کم اوراقی

الٹ جائیں گی تدبیریں بدل جائیں گی تقدیریں

حقیقت ہے نہیں میرے تخیل کی ہے خلاقی

(615) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Na Ho Tughyan-e-mushtaqi To Main Rahta Nahin Baqi In Urdu By Famous Poet Allama Iqbal. Na Ho Tughyan-e-mushtaqi To Main Rahta Nahin Baqi is written by Allama Iqbal. Enjoy reading Na Ho Tughyan-e-mushtaqi To Main Rahta Nahin Baqi Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Allama Iqbal. Free Dowlonad Na Ho Tughyan-e-mushtaqi To Main Rahta Nahin Baqi by Allama Iqbal in PDF.