تھا جہاں مدرسۂ شیری و شاہنشاہی

تھا جہاں مدرسۂ شیری و شاہنشاہی

آج ان خانقہوں میں ہے فقط روباہی

نظر آئی نہ مجھے قافلہ سالاروں میں

وہ شبانی کہ ہے تمہید کلیم اللہٰی

لذت نغمہ کہاں مرغ خوش الحاں کے لیے

آہ اس باغ میں کرتا ہے نفس کوتاہی

ایک سرمستی و حیرت ہے سراپا تاریک

ایک سرمستی و حیرت ہے تمام آگاہی

صفت برق چمکتا ہے مرا فکر بلند

کہ بھٹکتے نہ پھریں ظلمت شب میں راہی

(630) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Tha Jahan Madrasa-e-shiri-o-shahanshahi In Urdu By Famous Poet Allama Iqbal. Tha Jahan Madrasa-e-shiri-o-shahanshahi is written by Allama Iqbal. Enjoy reading Tha Jahan Madrasa-e-shiri-o-shahanshahi Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Allama Iqbal. Free Dowlonad Tha Jahan Madrasa-e-shiri-o-shahanshahi by Allama Iqbal in PDF.