کیا عشق ایک زندگئ مستعار کا (ردیف .. و)

کیا عشق ایک زندگئ مستعار کا

کیا عشق پائیدار سے ناپائیدار کا

وہ عشق جس کی شمع بجھا دے اجل کی پھونک

اس میں مزہ نہیں تپش و انتظار کا

میری بساط کیا ہے تب و تاب یک نفس

شعلہ سے بے محل ہے الجھنا شرار کا

کر پہلے مجھ کو زندگیٔ جاوداں عطا

پھر ذوق و شوق دیکھ دل بے قرار کا

کانٹا وہ دے کہ جس کی کھٹک لا زوال ہو

یارب وہ درد جس کی کسک لا زوال ہو

(812) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Kya Ishq Ek Zindagi-e-mustaar Ka In Urdu By Famous Poet Allama Iqbal. Kya Ishq Ek Zindagi-e-mustaar Ka is written by Allama Iqbal. Enjoy reading Kya Ishq Ek Zindagi-e-mustaar Ka Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Allama Iqbal. Free Dowlonad Kya Ishq Ek Zindagi-e-mustaar Ka by Allama Iqbal in PDF.