لکھی ہوئی جو تباہی ہے اس سے کیا جاتا

لکھی ہوئی جو تباہی ہے اس سے کیا جاتا

ہوا کے رخ پہ مگر کچھ تو ناخدا جاتا

جو بات دل میں تھی اس سے نہیں کہی ہم نے

وفا کے نام سے وہ بھی فریب کھا جاتا

کشید مے پہ ہے کیسا فساد حاکم شہر

تری گرہ سے ہے کیا بندۂ خدا جاتا

خدا کا شکر ہے تو نے بھی مان لی مری بات

رفو پرانے دکھوں پر نہیں کیا جاتا

مثال برق جو خواب جنوں میں چمکی تھی

اس آگہی کے تعاقب میں ہوں چلا جاتا

لباس تازہ کے خواہاں ہوئے ہیں ذرہ و سنگ

اک آئنہ ہے کوئی دور سے دکھا جاتا

عجب تماشۂ صحرا ہے چاک محمل پر

غبار قیس ہے پردہ کوئی گرا جاتا

جو آگ بجھ نہ سکے گی اسی کے دامن میں

ہر ایک شہر ہے ایجاد کا بسا جاتا

(401) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Likhi Hui Jo Tabahi Hai Us Se Kya Jata In Urdu By Famous Poet Aziz Hamid Madni. Likhi Hui Jo Tabahi Hai Us Se Kya Jata is written by Aziz Hamid Madni. Enjoy reading Likhi Hui Jo Tabahi Hai Us Se Kya Jata Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Aziz Hamid Madni. Free Dowlonad Likhi Hui Jo Tabahi Hai Us Se Kya Jata by Aziz Hamid Madni in PDF.