اداس رات ہے کوئی تو خواب دے جاؤ

اداس رات ہے کوئی تو خواب دے جاؤ

مرے گلاس میں تھوڑی شراب دے جاؤ

بہت سے اور بھی گھر ہیں خدا کی بستی میں

فقیر کب سے کھڑا ہے جواب دے جاؤ

میں زرد پتوں پر شبنم سجا کے لایا ہوں

کسی نے مجھ سے کہا تھا حساب دے جاؤ

ادب نہیں ہے یہ اخبار کے تراشے ہیں

گئے زمانوں کی کوئی کتاب دے جاؤ

پھر اس کے بعد نظارے نظر کو ترسیں گے

وہ جا رہا ہے خزاں کے گلاب دے جاؤ

مری نظر میں رہے ڈوبنے کا منظر بھی

غروب ہوتا ہوا آفتاب دے جاؤ

ہزار صفحوں کا دیوان کون پڑھتا ہے

بشیرؔ بدر کا کوئی انتخاب دے جاؤ

(781) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Udas Raat Hai Koi To KHwab De Jao In Urdu By Famous Poet Bashir Badr. Udas Raat Hai Koi To KHwab De Jao is written by Bashir Badr. Enjoy reading Udas Raat Hai Koi To KHwab De Jao Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Bashir Badr. Free Dowlonad Udas Raat Hai Koi To KHwab De Jao by Bashir Badr in PDF.