ہم ہتھیلی پہ جان رکھتے ہیں

ہم ہتھیلی پہ جان رکھتے ہیں

اور تیری امان رکھتے ہیں

چند اشکوں کے واسطے صاحب

تیری باتوں کا مان رکھتے ہیں

تم گزرتے ہو اجنبی بن کر

ہم تو دل پر چٹان رکھتے ہیں

جو بھی ہیں ہم بس اک ہمیں ہیں ہم

دوست کیا کیا گمان رکھتے ہیں

میٹھی باتوں سے کیا انہیں مطلب

ہر گھڑی سینا تان رکھتے ہیں

کتنے شاطر ہیں وہ مرے ہم دم

دل میں تیر و کمان رکھتے ہیں

خامشی مصلحت رہی مہتابؔ

ورنہ ہم بھی زبان رکھتے ہیں

(347) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hum Hatheli Pe Jaan Rakhte Hain In Urdu By Famous Poet Bashir Mehtaab. Hum Hatheli Pe Jaan Rakhte Hain is written by Bashir Mehtaab. Enjoy reading Hum Hatheli Pe Jaan Rakhte Hain Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Bashir Mehtaab. Free Dowlonad Hum Hatheli Pe Jaan Rakhte Hain by Bashir Mehtaab in PDF.