جب سر بام وہ خورشید جمال آتا ہے

جب سر بام وہ خورشید جمال آتا ہے

ذرے ذرے پہ قیامت کا جلال آتا ہے

پھول مسکاتے ہیں لہراتی ہے ٹہنی ٹہنی

فصل گل آتے ہی ہر شے پہ جمال آتا ہے

وہ جنم دن پہ بلاتے ہیں ہمیشہ مجھ کو

ہر نیا سال بانداز وصال آتا ہے

کیوں ترے ہونٹ مجھے دیتے ہیں منفی میں جواب

میرے ہونٹوں پہ یہ رہ رہ کے سوال آتا ہے

جب سوالی کوئی آ جاتا ہے در پر تو مجھے

اس کی بخشی ہوئی نعمت کا خیال آتا ہے

ان کے کھلتے ہوئے جوبن کو وہ مرجھا نہ سکا

آنے کو دور خزاں سال بہ سال آتا ہے

مجھے جچتی ہی نہیں اور کسی کی صورت

جب خیال آتا ہے تیرا ہی خیال آتا ہے

تارے گنواتی ہیں پھر ہجر کی کالی راتیں

جب مجھے یاد کوئی زہرہ جمال آتا ہے

یوں رخ زرد چمک اٹھتا ہے آنے پہ ترے

جیسے ہولی میں کوئی مل کے گلال آتا ہے

اپنے ہاتھوں کے پلے لوگ جو ہو جائیں خلاف

ان کے اخلاق پہ اے چرخؔ ملال آتا ہے

(909) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Jab Sar-e-baam Wo KHurshid-jamal Aata Hai In Urdu By Famous Poet Charkh Chinioti. Jab Sar-e-baam Wo KHurshid-jamal Aata Hai is written by Charkh Chinioti. Enjoy reading Jab Sar-e-baam Wo KHurshid-jamal Aata Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Charkh Chinioti. Free Dowlonad Jab Sar-e-baam Wo KHurshid-jamal Aata Hai by Charkh Chinioti in PDF.