کیوں یورش طرب میں بھی غم یاد آ گئے

کیوں یورش طرب میں بھی غم یاد آ گئے

سوچا ترے کرم کو ستم یاد آ گئے

اے دوست میکدے میں یہ کیسی ہوا چلی

سب فتنہ ہائے دیر و حرم یاد آ گئے

روشن ابھی ہوا تھا سر جادۂ حیات

اک کاکل سیاہ کے خم یاد آ گئے

اب کیا دکھا رہا ہے رہ ماہ و کہکشاں

ناصح کسی کے نقش قدم یاد آ گئے

ایک ایک کر کے ٹوٹ چکے ہیں خرد کے بت

بت خانۂ جنوں کے صنم یاد آ گئے

(1434) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Kyun Yurish-e-tarab Mein Bhi Gham Yaad Aa Gae In Urdu By Famous Poet Ehtisham Husain. Kyun Yurish-e-tarab Mein Bhi Gham Yaad Aa Gae is written by Ehtisham Husain. Enjoy reading Kyun Yurish-e-tarab Mein Bhi Gham Yaad Aa Gae Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ehtisham Husain. Free Dowlonad Kyun Yurish-e-tarab Mein Bhi Gham Yaad Aa Gae by Ehtisham Husain in PDF.