ترے بغیر لگ رہا ہے یہ سفر خموش ہے

ترے بغیر لگ رہا ہے یہ سفر خموش ہے

ہوا تھمی ہوئی ہے اور رہ گزر خموش ہے

ہیں اپنی اپنی جا پہ دونوں مضطرب کہ کیا کریں

تری نگہ میں شور ہے مری نظر خموش ہے

تری صدائیں آ نہیں رہی ہیں اس سکوت میں

کہ ہونٹ ہل رہے ہیں تیرے تو مگر خموش ہے

پکارتا ہوں اپنے آپ کو کہ مر نہ جاؤں میں

مگر پکار پر مری طرح نگر خموش ہے

کوئی تو گنگ رہ گیا کسی کو سانپ ڈس گیا

کہ بام چپ ہے در کھلا پڑا ہے گھر خموش ہے

(3418) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Tere Baghair Lag Raha Hai Ye Safar KHamosh Hai In Urdu By Famous Poet Ezaz Kazmi. Tere Baghair Lag Raha Hai Ye Safar KHamosh Hai is written by Ezaz Kazmi. Enjoy reading Tere Baghair Lag Raha Hai Ye Safar KHamosh Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ezaz Kazmi. Free Dowlonad Tere Baghair Lag Raha Hai Ye Safar KHamosh Hai by Ezaz Kazmi in PDF.