گو سب کو بہم ساغر و بادہ تو نہیں تھا

گو سب کو بہم ساغر و بادہ تو نہیں تھا

یہ شہر اداس اتنا زیادہ تو نہیں تھا

گلیوں میں پھرا کرتے تھے دو چار دوانے

ہر شخص کا صد چاک لبادہ تو نہیں تھا

منزل کو نہ پہچانے رہ عشق کا راہی

ناداں ہی سہی ایسا بھی سادہ تو نہیں تھا

تھک کر یوں ہی پل بھر کے لیے آنکھ لگی تھی

سو کر ہی نہ اٹھیں یہ ارادہ تو نہیں تھا

واعظ سے رہ و رسم رہی رند سے صحبت

فرق ان میں کوئی اتنا زیادہ تو نہیں تھا

(839) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Go Sab Ko Baham Saghar O Baada To Nahin Tha In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Go Sab Ko Baham Saghar O Baada To Nahin Tha is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Go Sab Ko Baham Saghar O Baada To Nahin Tha Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Go Sab Ko Baham Saghar O Baada To Nahin Tha by Faiz Ahmad Faiz in PDF.