پھر حریف بہار ہو بیٹھے

پھر حریف بہار ہو بیٹھے

جانے کس کس کو آج رو بیٹھے

تھی مگر اتنی رائیگاں بھی نہ تھی

آج کچھ زندگی سے کھو بیٹھے

تیرے در تک پہنچ کے لوٹ آئے

عشق کی آبرو ڈبو بیٹھے

ساری دنیا سے دور ہو جائے

جو ذرا تیرے پاس ہو بیٹھے

نہ گئی تیری بے رخی نہ گئی

ہم تری آرزو بھی کھو بیٹھے

فیضؔ ہوتا رہے جو ہونا ہے

شعر لکھتے رہا کرو بیٹھے

(428) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Phir Harif-e-bahaar Ho BaiThe In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Phir Harif-e-bahaar Ho BaiThe is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Phir Harif-e-bahaar Ho BaiThe Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Phir Harif-e-bahaar Ho BaiThe by Faiz Ahmad Faiz in PDF.