تری امید ترا انتظار جب سے ہے

تری امید ترا انتظار جب سے ہے

نہ شب کو دن سے شکایت نہ دن کو شب سے ہے

کسی کا درد ہو کرتے ہیں تیرے نام رقم

گلہ ہے جو بھی کسی سے ترے سبب سے ہے

ہوا ہے جب سے دل ناصبور بے قابو

کلام تجھ سے نظر کو بڑے ادب سے ہے

اگر شرر ہے تو بھڑکے جو پھول ہے تو کھلے

طرح طرح کی طلب تیرے رنگ لب سے ہے

کہاں گئے شب فرقت کے جاگنے والے

ستارۂ سحری ہم کلام کب سے ہے

(1021) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Teri Umid Tera Intizar Jab Se Hai In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Teri Umid Tera Intizar Jab Se Hai is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Teri Umid Tera Intizar Jab Se Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Teri Umid Tera Intizar Jab Se Hai by Faiz Ahmad Faiz in PDF.