تم آئے ہو نہ شب انتظار گزری ہے

تم آئے ہو نہ شب انتظار گزری ہے

تلاش میں ہے سحر بار بار گزری ہے

جنوں میں جتنی بھی گزری بکار گزری ہے

اگرچہ دل پہ خرابی ہزار گزری ہے

ہوئی ہے حضرت ناصح سے گفتگو جس شب

وہ شب ضرور سر کوئے یار گزری ہے

وہ بات سارے فسانے میں جس کا ذکر نہ تھا

وہ بات ان کو بہت نا گوار گزری ہے

نہ گل کھلے ہیں نہ ان سے ملے نہ مے پی ہے

عجیب رنگ میں اب کے بہار گزری ہے

چمن پہ غارت گلچیں سے جانے کیا گزری

قفس سے آج صبا بے قرار گزری ہے

(317) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Tum Aae Ho Na Shab-e-intizar Guzri Hai In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Tum Aae Ho Na Shab-e-intizar Guzri Hai is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Tum Aae Ho Na Shab-e-intizar Guzri Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Tum Aae Ho Na Shab-e-intizar Guzri Hai by Faiz Ahmad Faiz in PDF.