بنیاد کچھ تو ہو

کوئے ستم کی خامشی آباد کچھ تو ہو

کچھ تو کہو ستم کشو فریاد کچھ تو ہو

بیداد گر سے شکوۂ بیداد کچھ تو ہو

بولو کہ شور حشر کی ایجاد کچھ تو ہو

مرنے چلے تو سطوت قاتل کا خوف کیا

اتنا تو ہو کہ باندھنے پائے نہ دست و پا

مقتل میں کچھ تو رنگ جمے جشن رقص کا

رنگیں لہو سے پنجۂ صیاد کچھ تو ہو

خوں پر گواہ دامن جلاد کچھ تو ہو

جب خوں بہا طلب کریں بنیاد کچھ تو ہو

گر تن نہیں زباں سہی آزاد کچھ تو ہو

دشنام نالہ ہاؤ ہو فریاد کچھ تو ہو

چیخے ہے درد اے دل برباد کچھ تو ہو

بولو کہ شور حشر کی ایجاد کچھ تو ہو

بولو کہ روز عدل کی بنیاد کچھ تو ہو

(269) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Buniyaad Kuchh To Ho In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Buniyaad Kuchh To Ho is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Buniyaad Kuchh To Ho Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Buniyaad Kuchh To Ho by Faiz Ahmad Faiz in PDF.