حسینۂ خیال سے

مجھے دے دے

رسیلے ہونٹ معصومانہ پیشانی حسیں آنکھیں

کہ میں اک بار پھر رنگینیوں میں غرق ہو جاؤں!

مری ہستی کو تیری اک نظر آغوش میں لے لے

ہمیشہ کے لیے اس دام میں محفوظ ہو جاؤں

ضیائے حسن سے ظلمات دنیا میں نہ پھر آؤں

گزشتہ حسرتوں کے داغ میرے دل سے دھل جائیں

میں آنے والے غم کی فکر سے آزاد ہو جاؤں

مرے ماضی و مستقبل سراسر محو ہو جائیں

مجھے وہ اک نظر اک جاودانی سی نظر دے دے

(591) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hasina-e-KHayal Se In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Hasina-e-KHayal Se is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Hasina-e-KHayal Se Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Hasina-e-KHayal Se by Faiz Ahmad Faiz in PDF.