ہم تو مجبور وفا ہیں

تجھ کو کتنوں کا لہو چاہیئے اے ارض وطن

جو ترے عارض بے رنگ کو گلنار کریں

کتنی آہوں سے کلیجہ ترا ٹھنڈا ہوگا

کتنے آنسو ترے صحراؤں کو گل زار کریں

تیرے ایوانوں میں پرزے ہوئے پیماں کتنے

کتنے وعدے جو نہ آسودۂ اقرار ہوئے

کتنی آنکھوں کو نظر کھا گئی بد خواہوں کی

خواب کتنے تری شہ راہوں میں سنگسار ہوئے

بلا کشان محبت پہ جو ہوا سو ہوا''

جو مجھ پہ گزری مت اس سے کہو، ہوا سو ہوا

مبادا ہو کوئی ظالم ترا گریباں گیر

''لہو کے داغ تو دامن سے دھو، ہوا سو ہوا

ہم تو مجبور وفا ہیں مگر اے جان جہاں

اپنے عشاق سے ایسے بھی کوئی کرتا ہے

تیری محفل کو خدا رکھے ابد تک قائم

ہم تو مہماں ہیں گھڑی بھر کے ہمارا کیا ہے

(1420) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hum To Majbur-e-wafa Hain In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Hum To Majbur-e-wafa Hain is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Hum To Majbur-e-wafa Hain Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Hum To Majbur-e-wafa Hain by Faiz Ahmad Faiz in PDF.