خدا وہ وقت نہ لائے

خدا وہ وقت نہ لائے کہ سوگوار ہو تو

سکوں کی نیند تجھے بھی حرام ہو جائے

تری مسرت پیہم تمام ہو جائے

تری حیات تجھے تلخ جام ہو جائے

غموں سے آئینۂ دل گداز ہو تیرا

ہجوم یاس سے بیتاب ہو کے رہ جائے

وفور درد سے سیماب ہوکے رہ جائے

ترا شباب فقط خواب ہو کے رہ جائے

غرور حسن سراپا نیاز ہو تیرا

طویل راتوں میں تو بھی قرار کو ترسے

تری نگاہ کسی غم گسار کو ترسے

خزاں رسیدہ تمنا بہار کو ترسے

کوئی جبیں نہ ترے سنگ آستاں پہ جھکے

کہ جنس عجز و عقیدت سے تجھ کو شاد کرے

فریب وعدۂ فردا پہ اعتماد کرے

خدا وہ وقت نہ لائے کہ تجھ کو یاد آئے

وہ دل کہ تیرے لیے بے قرار اب بھی ہے

وہ آنکھ جس کو ترا انتظار اب بھی ہے

(1515) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

KHuda Wo Waqt Na Lae In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. KHuda Wo Waqt Na Lae is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading KHuda Wo Waqt Na Lae Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad KHuda Wo Waqt Na Lae by Faiz Ahmad Faiz in PDF.