سجاد ظہیرؔ کے نام

نہ اب ہم ساتھ سیر گل کریں گے

نہ اب مل کر سر مقتل چلیں گے

حدیث دلبراں باہم کریں گے

نہ خون دل سے شرح غم کریں گے

نہ لیلائے سخن کی دوست داری

نہ غم ہائے وطن پر اشک باری

سنیں گے نغمۂ زنجیر مل کر

نہ شب بھر مل کے چھلکائیں گے ساغر

بنام شاہد نازک خیالاں

بیاد مستیٔ چشم غزالاں

بنام انبساط بزم رنداں

بیاد کلفت ایام زنداں

صبا اور اس کا انداز تکلم

سحر اور اس کا آغاز تبسم

فضا میں ایک ہالہ سا جہاں ہے

یہی تو مسند پیر مغاں ہے

سحر گہ اب اسی کے نام ساقی

کریں اتمام دور جام ساقی

بساط بادۂ و مینا اٹھا لو

بڑھا دو شمع محفل بزم والو

پیو اب ایک جام الوداعی

پیو اور پی کے ساغر توڑ ڈالو

(854) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Sajjad-zahir Ke Nam In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Sajjad-zahir Ke Nam is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Sajjad-zahir Ke Nam Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Sajjad-zahir Ke Nam by Faiz Ahmad Faiz in PDF.