زنداں کی ایک شام

شام کے پیچ و خم ستاروں سے

زینہ زینہ اتر رہی ہے رات

یوں صبا پاس سے گزرتی ہے

جیسے کہہ دی کسی نے پیار کی بات

صحن زنداں کے بے وطن اشجار

سرنگوں محو ہیں بنانے میں

دامن آسماں پہ نقش و نگار

شانۂ بام پر دمکتا ہے

مہرباں چاندنی کا دست جمیل

خاک میں گھل گئی ہے آب نجوم

نور میں گھل گیا ہے عرش کا نیل

سبز گوشوں میں نیلگوں سائے

لہلہاتے ہیں جس طرح دل میں

موج درد فراق یار آئے

دل سے پیہم خیال کہتا ہے

اتنی شیریں ہے زندگی اس پل

ظلم کا زہر گھولنے والے

کامراں ہو سکیں گے آج نہ کل

جلوہ گاہ وصال کی شمعیں

وہ بجھا بھی چکے اگر تو کیا

چاند کو گل کریں تو ہم جانیں

(230) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Zindan Ki Ek Sham In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Zindan Ki Ek Sham is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Zindan Ki Ek Sham Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Zindan Ki Ek Sham by Faiz Ahmad Faiz in PDF.