رہ جائے یا بلا سے یہ جان رہ نہ جائے

رہ جائے یا بلا سے یہ جان رہ نہ جائے

تیرا تو اے ستمگر ارمان رہ نہ جائے

جو دل کی حسرتیں ہیں سب دل میں ہوں تو بہتر

اس گھر سے کوئی باہر مہمان رہ نہ جائے

اقرار وصل تو ہے ایسا نہ ہو نہ آئیں

مشکل ہماری ہو کر آسان رہ نہ جائے

اے سوز غم جلا دے اے درد خوں رلا دے

کچھ ان کی دل لگی کا سامان رہ نہ جائے

سب منزلیں ہوئیں طے محشر ہے اور اے دل

یہ ایک رہ گیا ہے میدان رہ نہ جائے

وہ جام کفر پرور بھر دے کہ مست کر دے

مستوں کے دل میں ساقی ایمان رہ نہ جائے

آ کر پلٹ نہ خالی اے مرگ جان لے جا

فانیؔ کے سر پہ تیرا احسان رہ نہ جائے

(399) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Rah Jae Ya Bala Se Ye Jaan Rah Na Jae In Urdu By Famous Poet Fani Badayuni. Rah Jae Ya Bala Se Ye Jaan Rah Na Jae is written by Fani Badayuni. Enjoy reading Rah Jae Ya Bala Se Ye Jaan Rah Na Jae Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Fani Badayuni. Free Dowlonad Rah Jae Ya Bala Se Ye Jaan Rah Na Jae by Fani Badayuni in PDF.