نہ سارے عیب ہیں عیب اور ہنر ہنر بھی نہیں

نہ سارے عیب ہیں عیب اور ہنر ہنر بھی نہیں

کچھ احتیاط تو کیجے پر اس قدر بھی نہیں

تمہارے ہجر میں باندھا ہے وہ سماں ہم نے

کہ آنکھ ہم سے ملاتا ہے نوحہ گر بھی نہیں

نہیں ذرا بھی تو اس نے نہیں ملایا رخ

میں اس کو دیکھ رہا تھا یہ جان کر بھی نہیں

یہ ہم نے بھول کی آ پہنچے ان کی محفل میں

پر ان سے عرض تمنا تو بھول کر بھی نہیں

کوئی تو رنگ بکھیرے گی زندگی کی یہ دھوپ

اگر طویل نہیں ہے تو مختصر بھی نہیں

بھلا میں کیسے اسے دوست مان لوں فرحتؔ

جو اہل ظلم نہیں اور چارہ گر بھی نہیں

(2411) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Na Sare Aib Hain Aib Aur Hunar Hunar Bhi Nahin In Urdu By Famous Poet Farhat Ali Khan. Na Sare Aib Hain Aib Aur Hunar Hunar Bhi Nahin is written by Farhat Ali Khan. Enjoy reading Na Sare Aib Hain Aib Aur Hunar Hunar Bhi Nahin Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Farhat Ali Khan. Free Dowlonad Na Sare Aib Hain Aib Aur Hunar Hunar Bhi Nahin by Farhat Ali Khan in PDF.