وہ برق کا ہو کہ موجوں کے پیچ و تاب کا رنگ

وہ برق کا ہو کہ موجوں کے پیچ و تاب کا رنگ

جدا ہے سب سے مرے دل کے اضطراب کا رنگ

شگفتگی مجھے زخم جگر کی یاد آئی

چمن میں دیکھ کے کھلتے ہوئے گلاب کا رنگ

کیا نہ ترک اگر ترک عاشقی کا خیال

خراب اور بھی ہوگا دل خراب کا رنگ

لگا رہے ہیں وہ نشتر سے زخم پر مرہم

نگاہ لطف و کرم میں بھی ہے عتاب کا رنگ

یہ مے کدہ تو ہے خود انقلاب کی دنیا

یہاں جمے گا نہ دنیا کے انقلاب کا رنگ

حوادثوں سے جمال رخ حیات ہے یوں

قریب شام ہو جس طرح آفتاب کا رنگ

دل تباہ کا فاضلؔ خدا ہی حافظ ہے

کہ اب ہے اور ہی کچھ درد‌ و اضطراب کا رنگ

(341) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Wo Barq Ka Ho Ki Maujon Ke Pech-o-tab Ka Rang In Urdu By Famous Poet Fazil Ansari. Wo Barq Ka Ho Ki Maujon Ke Pech-o-tab Ka Rang is written by Fazil Ansari. Enjoy reading Wo Barq Ka Ho Ki Maujon Ke Pech-o-tab Ka Rang Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Fazil Ansari. Free Dowlonad Wo Barq Ka Ho Ki Maujon Ke Pech-o-tab Ka Rang by Fazil Ansari in PDF.