وقت غروب آج کرامات ہو گئی

وقت غروب آج کرامات ہو گئی

زلفوں کو اس نے کھول دیا رات ہو گئی

کل تک تو اس میں ایسی کرامت نہ تھی کوئی

وہ آنکھ آج قبلۂ حاجات ہو گئی

اے سوز عشق تو نے مجھے کیا بنا دیا

میری ہر ایک سانس مناجات ہو گئی

اوچھی نگاہ ڈال کے اک سمت رکھ دیا

دل کیا دیا غریب کی سوغات ہو گئی

کچھ یاد آ گئی تھی وہ زلف شکن شکن

ہستی تمام چشمۂ ظلمات ہو گئی

اہل وطن سے دور جدائی میں یار کی

صبر آ گیا فراقؔ کرامات ہو گئی

(475) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Waqt-e-ghurub Aaj Karamat Ho Gai In Urdu By Famous Poet Firaq Gorakhpuri. Waqt-e-ghurub Aaj Karamat Ho Gai is written by Firaq Gorakhpuri. Enjoy reading Waqt-e-ghurub Aaj Karamat Ho Gai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Firaq Gorakhpuri. Free Dowlonad Waqt-e-ghurub Aaj Karamat Ho Gai by Firaq Gorakhpuri in PDF.