نہیں آساں کسی کے واسطے تخمینہ میرا

نہیں آساں کسی کے واسطے تخمینہ میرا

مقرر ہے دیار غیب سے روزینہ میرا

دم رخصت اگر میں حوصلے سے کام لیتا

پلٹ کر دیکھ سکتا تھا اسے آئینہ میرا

ہدف بن پائیں گی آنکھیں نہ میرے دشمنوں کی

مقابل ہے خدنگ خواب کے اب سینہ میرا

پڑا رہتا ہوں کنج عافیت میں سر چھپا کر

گزر جاتا ہے یوں ہی ثبت اور آدینہ میرا

بڑھاپا چھا رہا ہے میرے ہر جذبے پہ لیکن

جواں ہوتا چلا جاتا ہے پھر بھی کینہ میرا

بدل سکتا تھا میرے شہر کا آہنگ ساجدؔ

اگر ترتیب پا سکتا کبھی سازینہ میرا

(443) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Nahin Aasan Kisi Ke Waste TaKHmina Mera In Urdu By Famous Poet Ghulam Husain Sajid. Nahin Aasan Kisi Ke Waste TaKHmina Mera is written by Ghulam Husain Sajid. Enjoy reading Nahin Aasan Kisi Ke Waste TaKHmina Mera Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ghulam Husain Sajid. Free Dowlonad Nahin Aasan Kisi Ke Waste TaKHmina Mera by Ghulam Husain Sajid in PDF.