ہر ایک غم نچوڑ کے ہر اک برس جیے

ہر ایک غم نچوڑ کے ہر اک برس جیے

دو دن کی زندگی میں ہزاروں برس جیے

صدیوں پہ اختیار نہیں تھا ہمارا دوست

دو چار لمحے بس میں تھے دو چار بس جیے

صحرا کے اس طرف سے گئے سارے کارواں

سن سن کے ہم تو صرف صدائے جرس جیے

ہونٹوں میں لے کے رات کے آنچل کا اک سرا

آنکھوں پہ رکھ کے چاند کے ہونٹوں کا مس جیے

محدود ہیں دعائیں مرے اختیار میں

ہر سانس پر سکون ہو تو سو برس جیے

(788) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Har Ek Gham NichoD Ke Har Ek Baras Jiye In Urdu By Famous Poet Gulzar. Har Ek Gham NichoD Ke Har Ek Baras Jiye is written by Gulzar. Enjoy reading Har Ek Gham NichoD Ke Har Ek Baras Jiye Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Gulzar. Free Dowlonad Har Ek Gham NichoD Ke Har Ek Baras Jiye by Gulzar in PDF.