رکے رکے سے قدم رک کے بار بار چلے

رکے رکے سے قدم رک کے بار بار چلے

قرار دے کے ترے در سے بے قرار چلے

اٹھائے پھرتے تھے احسان جسم کا جاں پر

چلے جہاں سے تو یہ پیرہن اتار چلے

نہ جانے کون سی مٹی وطن کی مٹی تھی

نظر میں دھول جگر میں لیے غبار چلے

سحر نہ آئی کئی بار نیند سے جاگے

تھی رات رات کی یہ زندگی گزار چلے

ملی ہے شمع سے یہ رسم عاشقی ہم کو

گناہ ہاتھ پہ لے کر گناہ گار چلے

(1347) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ruke Ruke Se Qadam Ruk Ke Bar Bar Chale In Urdu By Famous Poet Gulzar. Ruke Ruke Se Qadam Ruk Ke Bar Bar Chale is written by Gulzar. Enjoy reading Ruke Ruke Se Qadam Ruk Ke Bar Bar Chale Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Gulzar. Free Dowlonad Ruke Ruke Se Qadam Ruk Ke Bar Bar Chale by Gulzar in PDF.