اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں

اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں

اب شوق کا کچھ اور ہی عالم ہے مری جاں

اب تذکرۂ خندۂ گل بار ہے جی پر

جاں وقف غم گریہ شبنم ہے مری جاں

رخ پر ترے بکھری ہوئی یہ زلف سیہ تاب

تصویر پریشانئ عالم ہے مری جاں

یہ کیا کہ تجھے بھی ہے زمانے سے شکایت

یہ کیا کہ تری آنکھ بھی پر نم ہے مری جاں

ہم سادہ دلوں پر یہ شب غم کا تسلط

مایوس نہ ہو اور کوئی دم ہے مری جاں

یہ تیری توجہ کا ہے اعجاز کہ مجھ سے

ہر شخص ترے شہر کا برہم ہے مری جاں

اے نزہت مہتاب ترا غم ہے مری زیست

اے نازش خورشید ترا غم ہے مری جاں

(610) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ab Teri Zarurat Bhi Bahut Kam Hai Meri Jaan In Urdu By Famous Poet Habib Jalib. Ab Teri Zarurat Bhi Bahut Kam Hai Meri Jaan is written by Habib Jalib. Enjoy reading Ab Teri Zarurat Bhi Bahut Kam Hai Meri Jaan Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Habib Jalib. Free Dowlonad Ab Teri Zarurat Bhi Bahut Kam Hai Meri Jaan by Habib Jalib in PDF.