بھلا بھی دے اسے جو بات ہو گئی پیارے

بھلا بھی دے اسے جو بات ہو گئی پیارے

نئے چراغ جلا رات ہو گئی پیارے

تری نگاہ پشیماں کو کیسے دیکھوں گا

کبھی جو تجھ سے ملاقات ہو گئی پیارے

نہ تیری یاد نہ دنیا کا غم نہ اپنا خیال

عجیب صورت حالات ہو گئی پیارے

اداس اداس ہیں شمعیں بجھے بجھے ساغر

یہ کیسی شام خرابات ہو گئی پیارے

وفا کا نام نہ لے گا کوئی زمانے میں

ہم اہل دل کو اگر مات ہو گئی پیارے

تمہیں تو ناز بہت دوستوں پہ تھا جالبؔ

الگ تھلگ سے ہو کیا بات ہو گئی پیارے

(935) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Bhula Bhi De Use Jo Baat Ho Gai Pyare In Urdu By Famous Poet Habib Jalib. Bhula Bhi De Use Jo Baat Ho Gai Pyare is written by Habib Jalib. Enjoy reading Bhula Bhi De Use Jo Baat Ho Gai Pyare Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Habib Jalib. Free Dowlonad Bhula Bhi De Use Jo Baat Ho Gai Pyare by Habib Jalib in PDF.