چور تھا زخموں سے دل زخمی جگر بھی ہو گیا

چور تھا زخموں سے دل زخمی جگر بھی ہو گیا

اس کو روتے تھے کہ سونا یہ نگر بھی ہو گیا

لوگ اسی صورت پریشاں ہیں جدھر بھی دیکھیے

اور وہ کہتے ہیں کوہ غم تو سر بھی ہو گیا

بام و در پر ہے مسلط آج بھی شام الم

یوں تو ان گلیوں سے خورشید سحر بھی ہو گیا

اس ستم گر کی حقیقت ہم پہ ظاہر ہو گئی

ختم خوش فہمی کی منزل کا سفر بھی ہو گیا

(727) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Chur Tha ZaKHmon Se Dil ZaKHmi Jigar Bhi Ho Gaya In Urdu By Famous Poet Habib Jalib. Chur Tha ZaKHmon Se Dil ZaKHmi Jigar Bhi Ho Gaya is written by Habib Jalib. Enjoy reading Chur Tha ZaKHmon Se Dil ZaKHmi Jigar Bhi Ho Gaya Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Habib Jalib. Free Dowlonad Chur Tha ZaKHmon Se Dil ZaKHmi Jigar Bhi Ho Gaya by Habib Jalib in PDF.