صورت ہے وہ ایسی کہ بھلائی نہیں جاتی

صورت ہے وہ ایسی کہ بھلائی نہیں جاتی

روداد غم ہجر سنائی نہیں جاتی

ہر صبح الم شام ستم کا ہے تسلسل

کیا دل پہ گزرتی ہے بتائی نہیں جاتی

کہتی ہے دلہن شام کی بالوں کو بکھیرے

یوں نیند بھی آنکھوں سے اڑائی نہیں جاتی

چاہت پہ کبھی بس نہیں چلتا ہے کسی کا

لگ جاتی ہے یہ آگ لگائی نہیں جاتی

آسان نہیں ہے نئی دنیا کا بسانا

لیکن کبھی تنہا یہ بسائی نہیں جاتی

اشکوں سے حسنؔ آگ کہیں دل کی بجھی ہے

یہ آگ تو دریا ہے بجھائی نہیں جاتی

(429) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Surat Hai Wo Aisi Ki Bhulai Nahin Jati In Urdu By Famous Poet Hasan Rizvi. Surat Hai Wo Aisi Ki Bhulai Nahin Jati is written by Hasan Rizvi. Enjoy reading Surat Hai Wo Aisi Ki Bhulai Nahin Jati Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Hasan Rizvi. Free Dowlonad Surat Hai Wo Aisi Ki Bhulai Nahin Jati by Hasan Rizvi in PDF.