عشق جان جہاں نصیب ہوا

عشق جان جہاں نصیب ہوا

اک زمانہ مرا رقیب ہوا

مر گئے ہم مسیح کے دم میں

یہ بھی اک واقعہ عجیب ہوا

ان سے کہہ دو کہ آپ پر عاشق

بیکس و بے وطن غریب ہوا

نہ سنے نالے کیا کسی گل نے

تجھ کو کیا رنج عندلیب ہوا

پاس آداب حسن یار رہا

عشق میرے لیے ادیب ہوا

جب نکیرین نے سوال کیے

یا علیؑ کہہ کے میں مجیب ہوا

میرا سر ہوگا اور ان کے پاؤں

یاور اپنا اگر نصیب ہوا

جب ہوا قبر میں سوال اے مہرؔ

یا علیؑ کہہ کے میں مجیب ہوا

(420) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ishq-e-jaan-e-jahan Nasib Hua In Urdu By Famous Poet Hatim Ali Mehr. Ishq-e-jaan-e-jahan Nasib Hua is written by Hatim Ali Mehr. Enjoy reading Ishq-e-jaan-e-jahan Nasib Hua Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Hatim Ali Mehr. Free Dowlonad Ishq-e-jaan-e-jahan Nasib Hua by Hatim Ali Mehr in PDF.